مسئلہ آپ کا، حل ہمارا

سوال: پڑھتے  ہوئے  ذہن  منتشر  رہتا ہے۔ ایسے  خیالات آتے  ہیں کہ  میں  فیل ہو جاؤں  گی۔ کیا کروں؟

جنت فردوس، گورنمنٹ  گرلز  ہائی سکول  ٹوبہ  بلوچاں، ضلع  بہاول نگر

جواب: پیاری بیٹی! پہلے  تو  اس پر غور کرنے  کی  ضرورت  ہے کہ  آخر ذہن  منتشر کیوں  رہتا ہے؟ کیا جماعت  میں پڑھائے  گئے اسباق  اچھی  طرح  سمجھ   میں نہیں  آتے  یا  جماعت کے ابتدا میں  آپ نے  پڑھائی پر زیادہ وقت  صرف نہیں  کیا۔ اکثر  اوقات دیکھنے میں آتا ہے کہ طلباء  و طالبات تعلیمی  سیشن  کے آغاز  میں اپنے  اسباق پر زیادہ توجہ  مرکوز نہیں  کرتے اور آج کا کام کل پر ٹالتے رہتے  ہیں، جس  کا  نتیجہ  یہ  نکلتا ہے  کہ  کام اتنا بڑھ  جاتا ہے کہ  ان سے  سنبھل نہیں  پاتا۔  امتحانات  قریب آنے  پر  نصاب انہیں کاٹ کھانے  کو  دوڑتاہے۔ ان حالات میں جب وہ  پڑھنے  کے لیے  بیٹھتے  ہیں تو ان کا  ذہن منتشر  ہو جاتا ہے۔ وسوسے انہیں  آگھیرتے  ہیں۔ ایسی  صورت  حال میں گھبرانے کی  بجائے  ہمت  و  حوصلے  سے کام لینا  چاہیے۔ پڑھتے ہوئے  کسی اور طرف  دھیان نہ  دیا  جائے۔ آپ یہ طریقہ اپنائیے کہ  پڑھنے  کا آغاز  اپنے  پسندیدہ  مضمون سے  کیجیے۔ ساتھ ہی  ساتھ اپنے   آپ  کو  سمجھائیے کہ  پہلے  تو  جو ہوا  سو ہوالیکن اگر  ان دنوں میں، میں  نے توجہ  نہ  دی  تو  یقیناً فیل ہو  جاؤں  گی۔ ذہن کے انتشار  سے  بچنے  کا ایک  طریقہ  یہ  بھی ہو سکتا ہے کہ   اپنے تمام  اہم کاموں سے  فارغ  ہو  کر  پڑھنے  کے لیے بیٹھیں  تاکہ  توجہ  بٹنے  کے امکانات  کم ہو سکیں۔ گھر  کے کسی  ایسے  فرد  سے جس سے  ذہنی ہم آہنگی  ہو،  اپنے ڈر اور  وسوسے   بیان کر دیا کیجیے۔ اس  سے ایک طرف تو ذہن ہلکا ہو جائے  گا تو  دوسری  طرف اس فرد  کے حوصلہ بڑھانے  سے  بھی  آپ بہتر محسوس کرنے  لگیں  گی۔

٭٭٭٭٭

سوال: مجھے  پڑھتے  پڑھتے  نیند آجاتی  ہے۔ ایسا  کرنے سے میری پڑھائی  متاثر  ہو رہی ہے۔ کام  مکمل  نہیں  کر  پاتی۔  اس مسئلے  پر قابو  پانے کے لیے  کوئی  حل بتا دیجیے۔

معافیہ  یٰسین، گورنمنٹ  گرلز ہائی  سکول ٹوبہ بلوچاں، ضلع  بہاول نگر

جواب: پڑھتے وقت  اکثر  طلباء  وطالبات غنودگی محسوس کرنے  لگتے ہیں،  اس  کی ایک  وجہ  یہ ہو سکتی  ہے کہ  رات کو  دیر سے سونے  کی وجہ سے  نیند پوری  نہیں  ہو پاتی۔ اپنے  سونے  کے لیے  ایک وقت مخصوص کیجیے  اور پھر سختی  سے  اس پر  عمل کیجیے۔ طبعی ماہرین کے مطابق ایک صحت مند  انسان کے لیے  روزانہ چھ  سے  آٹھ گھنٹے کی  نیند لینا  ضروری ہوتا ہے۔ دوپہر  کے  وقت  آدھ گھنٹے  کا  قیلولہ  بھی  بہت مفید  ہوتا  ہے۔ پڑھائی کے دوران نیند کا  غلبہ  محسوس کریں تو  اپنی  جگہ سے اٹھ کر  ٹہلنا شروع  کر  دیجیے اور اپنے منہ  پر  پانی کے  چھینٹے  ماریں، پھر دوبارہ   اپنی جگہ  پر بیٹھ  کر  پڑھائی  شروع  کر  دیجیے۔ بہت  سے  مضامین کی  تیاری اور دہرائی  تو ویسے بھی  چل  پھر  کر  کی  جا سکتی  ہے سو  ایسا  بھی  کر  کے دیکھیے۔ اگر  موزوں جگہ  میسر  ہو  تو  کمرے  کے  بجائے  برآمدے  یا چھت پر  بھی  پڑھنا نیند  کو  بھگانے  کا  سبب  بن  سکتا ہے۔ ایک اور  احتیاط  یہ  بھی  کرنا لازم ہے کہ  آپ ان اوقات  کا  تعین کیجیے  جن میں  آپ  زیادہ  نیند یا غنودگی  محسوس  کرتی  ہیں۔ ان اوقات میں  آپ  ایسے مضامین پڑھنے کو ترجیح دیجیے  جن  میں  آپ  دل چسپی محسوس کرتی ہیں  نہ کہ  ان مضامین  کو ، جن  کو  پڑھنا آپ کو  مشکل  یا  اکتا دینے والا  لگتا ہے۔  ایسا  کرنے  سے نیند  آپ سے  کوسوں دور بھاگے گی  اور  آپ  باآسانی  پڑھ سکیں  گی۔

٭٭٭٭٭

سوال: دنیا مطلبی  ہے۔ ہر کوئی ہمیں اپنے مطلب  کے لیے استعمال کرتا ہے  حتیٰ  کہ اپنے  دوست  بھی مطلب کے لیے استعمال کرتے  ہیں۔ یہ  بات مجھے  بہت  پریشان  کرتی  ہے؟

شعیب  احمد، گورنمنٹ ہائی سکول  جہانیاں، ضلع  خانیوال

جواب: آپ نے  درست  کہا کہ دنیا  مطلبی  ہے۔ لیکن اس مطلبی  دنیامیں جہاں مطلبی  دوست  قدم قدم پر  ملتے ہیں وہیں مخلص  ، بے لوث  اور  محبت  کرنے  والے  دوستوں کی بھی  کمی نہیں۔ دوسروں کو ٹھیک  کرنا تو شاید  ہمارے بس میں  نہیں لیکن  اپنے  آپ کو بہتر  بنانا  تو کُلی طور  پر ہمارے اختیار  میں  ہے۔ آپ  خود  درد  دل  رکھنے  والے  ہمدرد اور مخلص انسان بن جائیے، ہم امید  کرتے  ہیں  کہ  آپ کو  اپنے  جیسے  دوسرے  بھی  ملنا شروع ہو  جائیں  گے۔ بہت سے تو شاید  آپ کو  دیکھ کر  بھی  اخلاص اور بہتری  کا  راستہ  چن لیں۔ یاد  رکھیے،  دوستی   ایک  خود  پیدا  کردہ  رشتہ ہے۔ اگر آپ کو مخلص دوست  نہیں ملتا   تو  آپ کسی کے مخلص  دوست  بن جائیے۔

٭٭٭٭٭

سوال: میرا  گاؤں ٹوبہ بلوچاں بہاول نگر  سے  14 کلومیٹر کے  فاصلے پر ہے۔ ہمارے  گاؤں میں  موبائل  فون کے  سگنلز کا مسئلہ ہے، جس کی  وجہ  سے  کسی  سےرابطہ  نہیں ہو  پاتا۔ گاؤں کے مکینوں کو  اس حوالے  سے پریشانی  کا سامنا  ہے۔ اس کا حل  بتائیے۔

عبدالمقدم، گورنمنٹ  ہائی سکول  ٹوبہ بلوچاں، ضلع  بہاول نگر

جواب: یہ مسئلہ  صرف  آپ کے  گاؤں کا نہیں  ہے، اس مسئلے سے  آج کل گاؤں کے  ساتھ  ساتھ شہر  والے  بھی  دوچار ہیں۔ وقت  کے ساتھ  ساتھ  موبائل  فون کمپنیوں  نے اپنے بوسٹر کی تعداد  میں اضافہ  نہیں  کیا۔ جو بوسٹر لگائے گئے ان پر بھی لوڈ بہت زیادہ  ہے جس  کی  وجہ سے  سگنل  کمزور آتے ہیں  اور  فون پر  بات     تعطل کا شکار ہو  جاتی ہے۔ اس مسئلے کا آسان حل  یہ  ہے کہ  گاؤں کے  مکین موبائل فون کمپنیوں کے نام  درخواست  لکھ کر انہیں اپنے مسئلےسے  آگاہ کریں  اور فوری  حل  کے لیے استدعا کریں۔ امید ہے کہ کمپنیاں  اس سلسلے میں  ضرور  عملی اقدامات  بروئے کار  لائیں  گی۔ اسی  حوالے سے  پی ٹی اے  نامی سرکاری ادارے میں بھی  شکایت کا اندراج  کروایا  جا سکتا  ہے، جس  کا طریقہ  کار ان  کی ویب سائٹ  پر  بھی دیا گیا ہے۔

٭٭٭٭٭

سوال: مجھے  غصہ  بہت  آتا  ہے لیکن  میں  اس پر قابو نہیں سکتی۔ میں  کیا کروں کہ  غصہ  جاتا  رہے۔

اریبہ  رشید،  گورنمنٹ  گرلز ہائی سکول  جہانیاں، ضلع  خانیوال

جواب: غصے  کا  سب سے  بڑا  علاج  خاموشی ہے۔ اگر  آپ  کو  اس بات کا ادراک ہوہی  چکا  ہے کہ  آپ غصہ  بہت  کرتی ہیں اور  اس  عادت سے نجات پانا چاہتی ہیں  تو اس امر  کا  عزم  بھی  کر لیں  کہ  اب جب بھی مجھے  غصہ آئے  گا میں  خاموشی  اختیار  کر  لوں  گی۔ آپ  دیکھیں  گی  کہ کچھ دیر بعد نہ صرف غصہ  رفع ہو گیا  ہو گا بلکہ وہ  بات کہ  جس پر  آپ  کو  بہت غصہ آ  رہا  تھا وہ بھی  اب  کچھ ایسی  بڑی  نہ  لگ  رہی ہو  گی۔یہ کام اگرچہ مشکل  ضرور  ہے  لیکن  ناممکن نہیں۔ غصہ کرنے  سے  بہت سے لوگ  آپ سے  دور ہو  جاتے  ہیں  لہذا غصے  کو  خود  سے دور کیجیے  اور  لوگوں  کو  اپنے قریب کیجیے۔

٭٭٭٭٭

سوال: میں کوئی بھی  کام  کرنے سے پہلے  سوچتی  نہیں  ہوں، بعد  میں  مجھے  بہت  سی مشکلات کا  سامنا کرنا پڑتا  ہے

مبرا ناصر، گورنمنٹ  گرلز  ہائی  سکول جہانیاں،  ضلع  خانیوال

جواب: چلیے ، مقام شکر  ہے کہ  آپ نے  یہ تو  سوچا کہ  آپ   کسی کام  کے  کرنے سے قبل  کچھ  سوچتی  نہیں ہیں۔ یاد  رکھیے  کہ جو  کام بھی بغیر سوچے  سمجھے  کیا جائے اس کا نتیجہ اچھا نہیں ہوتا۔ جس  طرح  یہ کہا جاتا ہے کہ پہلے  تولو پھر بولو، اسی طرح  پہلے  سوچو پھر  کرو۔کسی کام کے  کرنے  سے پہلے  اس پر خوب  غور  کیجیے اوراس کے  تمام پہلوؤں پر  نگاہ  ڈالیے۔ اگر کوئی  اہم کام  کرنے کا ارادہ ہے  تو اس کے حوالے  سے  مثبت  و منفی  نکات  کاغذ پر لکھ  کر  غوروفکر کیجیے۔ ضرورت محسوس کریں تو بڑوں  سے  مشورہ  کیجیے۔ ایسا کرکے دیکھیے آپ کا  ہر  کام  خوب سے خوب تر ہو گا اور آپ کو  کسی  پریشانی کا سامنا نہیں کرنا  پڑے گا۔

٭٭٭٭٭

سوال : میں جماعت نہم کی  طالبہ ہوں۔ نہم کے  امتحان  میں زیادہ  اچھے نمبر نہیں  لے سکی تھی، اس کی  بنیادی  وجہ موبائل  فون کا  بہت  زیادہ  استعمال  ہے۔ پریشان  ہوں۔ بتائیے کیا کروں؟

حمنہ محمود، گورنمنٹ گرلز ہائی  سکول  جہانیاں، ضلع  خانیوال

جواب: یہ بات  قابل ستائش    ہے کہ  آپ  کو  اس بات  کا  احساس  ہے  کہ  آپ  نہم جماعت  کے امتحان میں اچھے نمبر نہیں لے  سکیں اور اس کی  بنیادی وجہ موبائل فون کا  بے تحاشا استعمال ہے۔ سیانے  کہتے  ہیں  کہ  انسان کی  حالت اس وقت  بہتری کی طرف  جاتی  ہے   جب اسے اپنی غلطی  کا احساس  ہو  جائے۔ طلباء   و  طالبات  کے  ساتھ ساتھ دیگر لوگ بھی  آج  اپنے موبائل  فون  پر  وقت  ضائع  کرتے  نظر  آتے  ہیں۔ کسی  جگہ  بھی  چلے  جائیں ، ہر کوئی  موبائل  فون  میں  مصروف نظر  آتا ہے۔ بچے  تو  بچے، بڑے  بھی  موبائل  فون کے سحر میں  گم ہو جاتے  ہیں۔  اک  ذرا سکرین  کو  چھوا  اور آن کی  آن میں کسی  اور جہان جا  پہنچے۔ پھر تو  آس  پاس کی  بھی  خبر  نہیں رہتی۔ موبائل فون کی  ضرورت  و  اہمیت  سے انکار نہیں ہے۔ اس کے  فوائد  بہت زیادہ  ہیں۔ کورونا وباء کے  دوران بھی موبائل  فون  کی  افادیت واضح طور پر نظر  آئی۔  اسی موبائل  فون کے  باعث  طلبہ  کی  آن لائن کلاسز تک رسائی  آسان ہو ئی۔  آج کل طلبہ  پڑھائی کے ساتھ  ساتھ  موبائل فون کو  دیگر سرگرمیوں  کے  لیے  بھی  استعمال کر  رہے  ہیں اور بلاضرورت  اس  کا  استعمال  بہت زیادہ بڑھ گیا ہے۔  آپ کے مسئلے  کا  ایک حل یہ  ہے   کہ  موبائل  فون گھر میں  کسی بڑے  (امی،  ابو، آپی ، بھیا) کے  پاس رکھوا  دیا جائے اور  ضرورت  کے  وقت  ان  سے لے  لیا جائے۔ اکثر تعلیمی  اداروں میں موبائل  فون   کے  استعمال  پر پابندی ہوتی  ہے۔  اگر  آپ موبائل  فون  سکول  لے  کر جاتی  ہیں  تو  آئندہ  سے  اسے  گھر   رکھ کر  جائیے۔ ویسے  بھی  پڑھائی کے  اوقات میں موبائل فون سے بچنا  چاہیے۔ ایسا کرنا  مشکل تو  ہے مگر  ناممکن نہیں۔ اگر  آپ کے لیے  موبائل  فون کا  استعمال اشد ضروری  ہے  تو  اس  کے  لیے  دن میں  کچھ  اوقات مقرر  کر لیجیے اور  انہی میں  ہی  موبائل  فون کا  استعمال کیجیے۔ ایسا  کرنے  سے  آپ کی  پڑھائی متاثر نہیں ہو گی۔ ان طریقوں پر  عمل کیجیے۔  ان شاء  اللہ  آپ کی  پریشانی جاتی  رہے  گی۔

٭٭٭٭٭

سوال: میرا سکول سے  چھٹیاں کرنے  کو  بہت  دل کرتا ہے۔  اساتذہ  بھی مجھ  سے  تنگ آ جاتے ہیں۔ مجھے  اپنے دوستوں  پر بہت حیرت  ہوتی ہے جو باقاعدگی  سے  سکول جاتے ہیں۔

محمد  ارسلان،  گورنمنٹ ایلیمنٹری سکول بہاول نگر

جواب: یہ اچھی بات  نہیں۔ سکول  نہیں جائیں گے  تو آپ کی  پڑھائی  متاثر  ہو  گی اورآپ بہتر  اندازمیں امتحان  کی  تیاری  نہ کر  پائیں گے۔ اگر  آپ سکول  سے زیادہ  چھٹیاں  اس لیے کر رہے ہیں  کہ  پڑھائی  میں کچھ  مسائل  کا  شکار  ہیں تو اپنے  اساتذہ  سے  بات  کیجیے، وہ یقیناً آپ کی مدد  کریں گے۔ اپنے   ان دوستوں  کو جو  باقاعدگی  سے  سکول  جاتے ہیں،  حیرت  کی  نظر  سے  نہ  دیکھیے، وہ  تو  قابل تعریف  اور  قابل  رشک ہیں۔ طالب علم کا  اپنے سکول  سے جتنا  گہرا تعلق  ہو گا، وہ اپنے تعلیمی مدارج  اتنی  ہی  خوش  اسلوبی  سے طے کرتا جائے  گا۔ اپنے دل کو  سمجھائیے۔  سکول  نہیں جائیں گے  اور  زیادہ چھٹیاں  کریں گے تو اپنی  تعلیم  میں  پیچھے رہ  جائیں  گے۔ باقاعدگی  سے سکول  جائیے اور آگے  بڑھتے  جائیے۔

سوال: میں پڑھنے کے لئے ٹائم ٹیبل بناتی ہوں مگر عمل نہیں کر پاتی، کوئی حل بتائیں ؟

عائشہ بانو، جماعت  دہم،گورنمنٹ گرلز ہائی سکول پھولڑہ، ضلع بہاول نگر

جواب: ٹائم ٹیبل میں ٹائم فکس نہ کریں،  مثلاً 3 بجے سے 4 بجے تک ریاضی کا مضمون پڑھنا ہے، لیکن اگر خدانخواستہ اس دوران آپ کو ایمرجنسی کام پڑ گیا تو آپ کا اگلا سارا لائحہ عمل بیکار جائے گا، آپ یہ کریں کہ لکھیں کہ آج میں نے ریا ضی کی مشق لازمی کرنی ہے پھر وہ ہر صورت کرکے چھوڑیئے، چاہے کتنا بھی وقت لگے، اپنی سستی پر قابو پائیں ، دو چار دن سختی برداشت کیجیے، عادی ہو جائیں گی۔

٭٭٭٭٭

سوال: میں  سبق یاد کرتی ہوں لیکن جب سنانا شروع کرتی ہوں تو بھول جاتی ہوں،  میں اپنےاس مسئلے پر کیسے قابو پاؤں؟

سعدیہ پروین، جماعت دہم، گورنمنٹ گرلز ہائی سکول پھولڑہ، ضلع بہاول نگر

جواب: جب سبق یاد کریں تو زبانی لکھ کر دیکھیں اور دو تین مرتبہ اونچی آواز میں اپنے آپ کو سنائیں، سبق کو سمجھ کر یاد کیجیے، الفاظ بدل بھی جائیں تو کوئی مسئلہ نہیں ،مفہوم وہی ہونا چاہیے۔

٭٭٭٭٭

سوال: میں وقت کی پابندی کو اپنانے کی کوشش  کرتی ہوں لیکن اس کو کسی بھی طرح اپنا نہیں پاتی، مہربانی فرما کر مجھے کوئی اس مسئلے کا کوئی حل بتائیں؟

رابعہ شفیق، جماعت ہفتم، گورنمنٹ گرلز ہائی سکول  303، ضلع بہاول نگر

جواب: اپنے اس مسئلے پر قابو پانے کے لیے سب سے  پہلے تو آپ ایک اوقات نامہ تیار کریں جس میں آپ اپنے ہر کام کو ایک مقررہ وقت پر کرنے کے لیے درج کریں تاکہ آپ متعلقہ وقت میں اپنا ہر کام سر انجام دے سکیں، اس کے علاوہ پڑھائی کے لیے آپ اپنا ایسا ٹائم ٹیبل بنائیں کہ آسان مضمون کو تھوڑا اور مشکل مضمون کو زیادہ وقت مل پائے۔

٭٭٭٭٭

سوال: مجھے کرکٹ کھیلنے کا بہت شوق ہے، میں بڑا ہو کر قومی کرکٹ ٹیم میں شامل ہونا چاہتا ہوں لیکن سب میرا مذاق اڑاتے ہیں اور میرا دل توڑتے ہیں۔

محمد عمر شاہین، جماعت فرسٹ ایئر، گورنمنٹ  سید شمس الدین ایسوسی ایٹ  کالج اوچ شریف، ضلع بہاول پور

جواب: ارے بچے شاہین بنیں شاہین۔ دوسروں کی ان باتوں کو دل میں رکھتے ہیں جو اچھی ہوں، دل کو اتنا آزاد نہیں چھوڑنا چاہیئے کہ کوئی بھی توڑ دے۔ مذاق کو مذاق میں ٹال دیا کیجئے۔ کھیل اچھی چیز ہے مگر پہلے تعلیم۔ دل لگا کر پڑھیں۔ اچھے نمبروں سے اور اچھی قابلیت سے آگے بڑھیں اور کرکٹ کی پریکٹس بھی جاری رکھیں۔ جب آپ کے انٹر سکولز مقابلوں میں آپ کی ٹیم دوسری ٹیم سے کھیلے پھر تحصیل اور ضلعی سطح پر۔۔۔ پھر اپنی محنت اور قابلیت سے ملکی ٹیم میں بھی پہنچ جائیے گا۔

٭٭٭٭٭

سوال: سبق سنانے میں روانی نہیں ہے، حالانکہ زبان میں کوئی نقص نہیں ہے۔ کیا کروں؟ احساس کمتری کا شکار ہوں۔

عمارہ شفیق ملک، جماعت  سکینڈ ایئر، کیمبرج ہائیر سکینڈری سکول اوچ شریف، ضلع  بہاول پور

جواب: آپ نے ضرور روانی سے سنانا ہے؟ ٹھہر ٹھہر کر آرام سے پڑھا اور سنایا کیجئے۔ احساس کمتری کا شکار ہونے کی ضرورت نہیں۔ روانی سے سبق تبھی یاد کیا جاسکتا ہے جب آپ اس سبق کو سنانے سے پہلے خوب مشق کریں۔اس طرح سبق بھی اچھے سے یاد ہوجائے گا اور روانی بھی آجائے گی۔

٭٭٭٭٭

سوال: میں تین چار دوستوں سے دھوکے پہ دھوکا کھا چکا ہوں۔ کیا میں پھر بھی ان کے ساتھ اچھا سلوک کروں؟

محمد آصف سرکی، جماعت نہم، شان اکیڈمی سرکی تحصیل علی پور، ضلع مظفر گڑھ

جواب: بالکل۔۔۔ اچھا اور بہت اچھا سلوک کیجئے۔ وہ برا کرتے ہیں تو ان کا عمل ان کے ساتھ۔ ہاں ان کے مزید دھوکوں کے انتظار میں رہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ بس ملیں تو اچھی طرح اور دل سے ملیں۔ اللہ پاک کی خوشی کے لئے اور ان کے لئے دعا کیجئے۔ جن کی محفل نقصان دہ ہو وہاں مت جائیں مگر جب ملیں تو اچھے رہیں۔

٭٭٭٭٭

سوال: نماز کے دوران بہت زیادہ خیالات آتے ہیں، جس کی وجہ سے میں بہت زیادہ پریشان ہوں۔
شعیب احمد علی، جماعت سکینڈ ایئر، گورنمنٹ ہائیر سکینڈری سکول چنی گوٹھ، ضلع بہاول پور
جواب: شعیب صاحب! زیادہ پریشانی کی بات نہیں، یہ فطری بات ہے۔ آپ نماز کا ترجمہ یاد کر لیجیے اور جو جو لفظ ادا کرتے جائیں اس کا ترجمہ سامنے لاتے جائیے۔ ذہن میں اپنے سامنے یہ تصور کر لیا کیجیے کہ اللہ جی آپ کے سامنے کھڑے ہیں۔ جتنی یکسوئی سے آپ ان کے آگے جھکیں گے، ویسے ہی محبت اور پیار سے وہ قبول کریں گے۔ خیال آتے ہیں تو آنے دیں۔ نماز مت چھوڑیں، اپنے آپ کم ہو جائیں گے۔
٭٭٭٭٭
سوال: مجے فزکس اور کیمسٹری کے مضامین پڑھنے میں بہت مشکل لگتے ہیں۔
احمد علی خان، جماعت نہم، گورنمنٹ کمپری ہینسیو بوائز ہائیر سکینڈری سکول ملتان
جواب: واہ جی حضرت، اگر یہ آپ کو مشکل لگتے ہیں تو سب سے پہلے آپ یہ سوچنا چھوڑ دیجیے کہ یہ مشکل ہیں۔ پھر خود کو چیلنج کر کے محنت کیجیے۔ کوئی کتاب کبھی خود انسان سے مشکل نہیں ہوتی۔ خود کو ذہنی طور پر تیار کر لیجیے کہ آپ نے کرنی ہے۔ پھر اپنے دوستوں کے ساتھ مل کر مختلف گیمز اور کوئز کی صورت اسے یاد رکھیے۔ ہاں اگر آپ کی دلچسپی ان مضامین میں نہیں، طبیعت کے خلاف ہے تو فوراً تبدیل کر کے دوسرے مضامین رکھ لیں۔
٭٭٭٭٭
سوال: میری یہ عادت نہیں جاتی کہ میں ناخن دانتوں سے کاٹتا ہوں۔
شاہد علی، جماعت دہم، گورنمنٹ ہائی سکول اوچ شریف ضلع بہاول پور
جواب: شاہد صاحب! خیر سے اب آپ بڑے ہو گئے ہیں۔ ناخن چبانا احساس محرومی کی علامت ہوتا ہے۔ کوئی بھی بری عادت اس وقت چھوٹتی ہے جب آپ اسے چھوڑنے کا پکا ارادہ کر لیں۔ خود کو ہمت دلائیں کہ ایک انسان ہو کر اتنی معمولی اور بری بات کو نہیں چھوڑ سکتے۔ یہی احساس کرنے اور خود کو خود ہی روکنے سے ہر غلط کام کرنے سے بچ جائیں گے۔ یہ کلیہ عمر بھر کام آتا ہے۔ جو غلطی کرتا ہے سدھارتا بھی خود ہے، کوئی دوسرا سدھارنے نہیں آتا۔
٭٭٭٭٭
سوال: مجھے یہ دنیا خود غرض لگتی ہے۔ گھٹن ہونے لگی ہے۔
شبیر احمد، جماعت فرسٹ ایئر، گورنمنٹ ڈگری کالج ڈیرہ نواب صاحب، ضلع بہاول پور
جواب:واہ جی حضرت، دنیا خود غرض تو لگے گی جب آپ اس کو خوب صورت بنانے میں اپنا حصہ نہیں ڈالیں گے۔ دوسروں سے توقع رکھنے کی بجائے خود ایک امید بنیں۔ سب سے پہلے اپنے آپ کے لیے ایک اچھے دوست بنیں، پھر دوسروں کے لیے چھوٹی چھوٹی خوشیوں کا باعث بنیں۔ اللہ جی نے ہر انسان کو دوسرے کی خوشی اور تکمیل کے لیے ہی بنایا ہے۔ صرف اپنے لیے سوچنے والے اور دوسروں سے اچھائی کی توقع رکھنے والے تو خالق کی دنیا کے منصوبے کے بھی خلاف چلتے ہیں اور اسے یہ کب پسند ہو گا۔
٭٭٭٭٭

سوال: بہت سے  رسالوں اور اخباروں میں قرآنی آیات یا ان کا  ترجمہ  باقاعدگی  سے شائع ہوتا ہے۔ ساتھ  یہ بھی لکھا ہوتا ہے کہ  قرآنی آیات  کا احترام آپ پر  لازم ہے۔ مگر  بہت کم لوگ اس ہدایت  پر عمل  کرتے  ہیں اور  اخبار کو  تو  پڑھنے  سے  زیادہ  دوسرے کاموں میں استعمال کیا  جاتا ہے۔ اخبار  الماریوں میں  بچھانے، لفافے بنانے،  گوشت  وغیرہ لپیٹنے  اور کتابوں کی جلدیں بنانے، کسی چیز کو  صاف کرنے ، جوتوں اور بیگوں میں ٹھونسنے  اور نجانے  کس کس کام آتے ہیں۔ آپ بتائیے کہ  قرآنی  آیات  کی  بے  ادبی  ہونے  سے  بچانے کے لیے ہم کیا  کر  سکتے ہیں؟

محمد شاہد، جماعت نہم، گورنمنٹ  ہائی سکول علی پور،ضلع مظفر گڑھ

جواب: اخباروں، رسالوں میں تبلیغ  اور اشاعت  کے مقصد سے قرآنی آیات کا ترجمہ  چھاپا جاتا ہے اور یقیناً جو  کوئی اسے اور ساتھ دی  گئی  ہدایت کو پڑھتا  ہو گا وہ  اسے احترام سے رکھتا بھی ہو گا۔  آپ کا  یہ  کہنا درست ہے کہ اخبار پڑھا  کم اور استعمال زیادہ کیا جاتا ہے۔ اپنے طور پر آپ یہ کر سکتے ہیں جہاں کہیں کوئی قرآنی آیات  پائیں، جس  رسالے یا اخبار میں قرآنی  آیات، ترجمہ یا  حدیث مبارکہ  چھپی ہوئی  دیکھیں اسے  احترام سے بلند جگہ پر رکھ دیجیے۔  اگر آپ سالم اخبار  یا رسالہ نہیں سنبھال سکتے تو اس آیت یا ترجمے کو وہاں  سے  کاٹ  لیں،  ایک فائل  بنائیں اور اس میں چسپاں کرتے جائیں۔  وقت ملے تو اسے  پڑھیں اور ہدایت حاصل کریں ۔ اگر اتنا بھی نہیں کر سکتے تو  گھر میں کوئی مرتبان ، کوئی ڈبہ  یا باسکٹ وغیرہ  مخصوص کر لیں  اور یہ تراشے اس میں اکٹھی کرتے جائیں۔  اس مقاصد کے لیے  مساجد، دینی مدارس اور عموماً کھمبوں وغیرہ کے  ساتھ ڈبے لگے ہوتے ہیں ۔  ان مقدس اوراق کو ان میں ڈال دیا کیجیے۔  لیکن یاد رکھیں کہ آپ اللہ  پاک  کے نام کا جتنا  بھی  احترام کریں گے، اللہ  پاک آپ کو بھی اتنی عزت  اور بلند مرتبہ  عطا کرے گا۔  حضرت بشر حافی رحمتہ  اللہ علیہ کا واقعہ تو  آپ نے سنا ہو  گا۔  وہ  شروع میں کوئی ایسے  نیک انسان  نہیں  تھے۔  نشے کی  حالت  میں ان کا  پاؤں ایک کاغذ پر پڑ گیا  جس پر  اللہ کا نام نامی اسم گرامی  درج تھا۔   آپ نے  فوراً اسے  اٹھایا  ، صاف کیا  ، چوما، خوشبو لگائی اور اللہ سے معافی مانگ  کر  کاغذکو احترام سے بلند مقام پر  رکھ دیا۔  اللہ پاک کو  ان کی یہ  ادا اتنی پسند آئی  کہ  انہیں فسق  وفجور  سے  نکال کر  ولی اللہ  کے بلند مرتبے پر فائز کر دیا اور اپنا پیارا بندہ بنا  لیا ۔  یوں سمجھیں کہ  ہماری  ذرا سی  احتیاط اور محبت ہمیں اللہ تعالیٰ کی نگاہ میں بلند  کر  دیتی ہے۔

سوال: میری یادداشت بہت کمزور ہے۔ میں ہر بات  بہت جلد  بھول جاتا  ہوں۔ سبق بھی یاد نہیں رہتا۔  کیا کروں؟

محمد حمزہ، جماعت ہشتم، گورنمنٹ  ایلیمنٹری سکول اوچ بخاری، ضلع  بہاول پور

جواب: حمزہ  میاں! حالات  ایسے ہی خراب ہیں تو  پھر  تو یہ  حل بھی پڑھ کر آپ   بھول جائیں گے۔ سیانے کہتے ہیں کہ بھول جانا  ایک نفسیاتی مسئلہ ہے۔  اس کو سوچنا اور پریشان ہونا کم کر دیں تو مسئلہ  بھی  کم ہونا شروع ہو  جائے  گا۔  جس جس بات اور چیز کو ضروری یاد  رکھنا ہو، اسے نوٹ کر لیا  کیجیے۔ بار بار دہرائیے اور  سوچ  کر دہرائیے۔  بلکہ کچھ پڑھیں تو  کسی دوسرے  سے شیئر کیجیے۔  کمرہ جماعت میں استاد صاحب کا لیکچر سنیں  تو اپنے قریبی ہم جماعت کو  بتائیں۔  بتانے  اور دہرانے سے بہت فائدہ  ہوتا  ہے۔  نوٹس  لینے  سے بہت  آسانی ہوتی ہے۔  سب سے  اہم بات  یہ کہ  کچھ بھی  پڑھیں یا  سنیں تو دل  و  دماغ کی موجودگی  کو  یقینی بنائیے۔  دل و دماغ ہی  حاضر نہ  ہوں تو پھر کون یاد رکھے  گا۔  توجہ بٹی ہو  تو  کسی  کی ذرا  سی  بھی بات  یاد نہیں رہتی۔  تو اب تک جان گئے  ہوں گے کہ یہ مسئلہ صرف  آپ کی  توجہ  طلبی ہے۔  ایک فوری  اور  آسان نسخہ نوٹ کیجیے ۔  روشنی میگزین کی  تحریریں پڑھیئے اور پھر  گھر  میں، کسی دوست سے جا  کر ذکر کیجیے کہ اس بار فلاں فلاں موضوعات پر  تحریریں ہیں۔   فلاں فلاں موضوعات پر  کہانیاں ہیں۔  وغیرہ  وغیرہ۔  بات  پڑھنے  اور  کسی  کو  سنانے سمجھانے  میں اس کو  دہراتے رہیئے ۔  آپ کو  ہر بات  فر فر یاد آ جایا کرے  گی۔   خرچہ  کرنا ہو تو اماں بی سے  کہیئے کہ  بادام کی سات  گریاں رات کو پانی میں ڈال دیا کریں، صبح اٹھ  کر مکھن اور شکر ملا کر  کھا  لیا کیجیے۔  فائدہ دو چند ہو جائے  گا۔

شیئر کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •