مسئلہ آپ کا ،حل ہمارا

 (سوال: مجھے کرکٹ کھیلنے کا بہت شوق ہے، میں بڑا ہو کر قومی کرکٹ ٹیم میں شامل ہونا چاہتا ہوں لیکن سب میرا مذاق اڑاتے ہیں اور میرا دل توڑتے ہیں۔  (محمد عمر شاہین

جواب: ارے بچے شاہین بنیں شاہین۔ دوسروں کی ان باتوں کو دل میں رکھتے ہیں جو اچھی ہوں، دل کو اتنا آزاد نہیں چھوڑنا چاہیئے کہ کوئی بھی توڑ دے۔ مذاق کو مذاق میں ٹال دیا کیجئے۔ کھیل اچھی چیز ہے مگر پہلے تعلیم۔ دل لگا کر پڑھیں۔ اچھے نمبروں سے اور اچھی قابلیت سے آگے بڑھیں اور کرکٹ کی پریکٹس بھی جاری رکھیں۔ جب آپ کے انٹر سکولز مقابلوں میں آپ کی ٹیم دوسری ٹیم سے کھیلے پھر تحصیل اور ضلعی سطح پر۔۔۔ پھر اپنی محنت اور قابلیت سے ملکی ٹیم میں بھی پہنچ جائیے گا۔

(سوال: سبق سنانے میں روانی نہیں ہے، حالانکہ زبان میں کوئی نقص نہیں ہے۔ کیا کروں؟ احساس کمتری کا شکار ہوں۔  (عمارہ شفیق ملک،کیمبرج ہائیر سکینڈری سکول اوچ شریف|

جواب: آپ نے ضرور روانی سے سنانا ہے؟ ٹھہر ٹھہر کر آرام سے پڑھا اور سنایا کیجئے۔ احساس کمتری کا شکار ہونے کی ضرورت نہیں۔ روانی سے سبق تبھی یاد کیا جاسکتا ہے جب آپ اس سبق کو سنانے سے پہلے خوب مشق کریں۔اس طرح سبق بھی اچھے سے یاد ہوجائے گا اور روانی بھی آجائے گی۔

(سوال: میں تین چار دوستوں سے دھوکے پہ دھوکا کھا چکا ہوں۔ کیا میں پھر بھی ان کے ساتھ اچھا سلوک کروں؟          (محمد آصف شان اکیڈمی سرکی تحصیل علی پور|

جواب: بالکل۔۔۔ اچھا اور بہت اچھا سلوک کیجئے۔ وہ برا کرتے ہیں تو ان کا عمل ان کے ساتھ۔ ہاں ان کے مزید دھوکوں کے انتظار میں رہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ بس ملیں تو اچھی طرح اور دل سے ملیں۔ اللہ پاک کی خوشی کے لئے اور ان کے لئے دعا کیجئے۔ جن کی محفل نقصان دہ ہو وہاں مت جائیں مگر جب ملیں تو اچھے رہیں۔

شیئر کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •