کتب خانہ

ہمدرد نونہال سات دہائیوں سے بچوں کا مقبول ترین رسالہ ہے۔ کچھ عرصہ قبل اس کی انتظامیہ نے اس میں بہت سی بنیادی تبدیلیاں متعارف کروائیں ہیں۔ اس حوالہ سے روزنامہ  ایکسپریس کے بلاگز میں شائع ہونے والے دو مضامین ہماری نظر سے گزرے ہیں۔ اگرچہ روشنی کا ادارتی بورڈ مضمون نگاروں کی رائے سے کلی طور پر اتفاق نہیں کرتا ، تاہم ان کے بہت سے مشاہدات کو قابل توجہ سمجھتا ہے اور روشنی کے توسط سے ہمدرد نونہال کے ذمہ داران کے روبرو رکھنا چاہے گا کہ وہ قارئین کی رائے سے آگاہ ہوسکیں اور اس ضمن میں مناسب فیصلہ بھی کر سکیں۔

اور ہمدرد نونہال بدل گیا۔ اکتوبر 2020 کا شمارہ دیکھ کر حیرت ہوئی۔ حیرت کی ایک وجہ تو یہ تھی کہ نونہال اتنے برس تک ایک ہی روٹین میں چلتا رہا۔ گزشتہ سال اس میں چند تبدیلیاں آئیں، لیکن وہ تبدیلیاں زیادہ اچھی نہیں تھیں۔ ایسا لگ رہا تھا کہ کوئی رسالے سے ذاتی انتقام لینے پر اُتر آیا ہے۔ سلیم مغل صاحب مدیراعلیٰ بنادیے گئے تھے، لیکن ان سے بات کرکے لگتا تھا کہ اختیارات کے مسائل سے نبردآزما ہیں۔ حتیٰ کہ نونہال جیسے ادارے میں ایک ڈھنگ کا ڈیزائنر تک موجود نہیں۔۔۔  مزید پڑہئے

اعظم طارق کوہستاتی، بدھ 25 نومبر 2020

اردوکے چاہنے والوں میں ماہنامہ ’’ہمدرد نونہال‘‘ سے کون واقف نہ ہوگا۔ تقریباً 70 سال سے اردو میں بچوں کے ادب کے افق پر جگمگاتا یہ رسالہ اردو زبان کی لغت سے کم حیثیت نہیں رکھتا تھا۔ بعض اسکولوں نے تو اسے اپنی اردو کی کتاب کی جگہ نصاب میں بھی شامل کر رکھا تھا۔۔۔  مزید پڑہئے

محمد زبیر فرید،    ہفتہ 26 دسمبر 2020
شیئر کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •