بول کہ لب آزاد ہیں تیرے

آپ سب جانتے ہیں کہ جب عورت کا نام لیا جائے تو اس میں ماں بہن بیٹی بیوی سب شامل ہیں ۔ ہمارے معاشرے میں عورت کو بلند مقام حاصل ہے۔ مگر آج کے زمانے میں عورت کو غلط عقائد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ آخر عورت کا قصور کیا ہے؟
یہ سب ہمارے برے خیالات ، غلط عقائد اور شک و شبہات کا نتیجہ ہے جو عورت کی زندگی کو برباد کر رہے ہیں۔
اگر عورت مردوں کے شانہ بشانہ کام نہ کرے تو کوئی بھی ملک ترقی نہیں کر سکتا۔ عورت کی تعلیم بہت ضروری ہے۔ ہمیں لڑکوں کی طرح لڑکیوں کی تعلیم پر توجہ دینی چاہیے۔
بقول نپولین بوناپارٹ
” آپ مجھے پڑھی لکھی مائیں دیں میں آپ کو پڑھا لکھا معا شرہ دوں گا ۔ ”
کیونکہ اس عورت سے ہی ہماری اگلی نسل تشکیل پاتی ہے۔ اگر عورت کی تعلیم و تربیت اچھی ہو گی تو ترقی یافتہ معاشرہ تشکیل پائے گا۔ ۔ آج کل کے زمانے میں عورت کی عزت کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ ہمارے معا شرے میں ہی یہ بھیڑیا نما لوگ موجود ہیں جو اپنے ہی معاشرے ، قوم یا قبیلے کی عزتوں کے لٹیرے ہیں۔ یہ جنگلی جانور کی طرح کاٹنے کو دوڑتے ہیں۔
لیکن اب ہمیں ان لوگوں کو سبق سکھانا ہو گا کہ کیا ان کے گھر میں کوئی ماں ، بہن بیٹی نہیں کہ جب یہ لوگ دوسروں کی عزت کے لٹیرے بنیں گے تو کوئی دوسرا ان کی عزت پر ڈاکا ڈ الے گا۔
کچھ بہنیں ان کے دباؤ کا شکار ہو جاتی ہیں اور خاموش ہو جاتی ہیں لیکن کب تک ان سے ڈریں گی۔
ع بول کہ لب آزاد ہیں تیرے
اب ایسا نہیں ہو گا۔ اب آواز بلند کرنا ہو گی۔ میری تمام بہنوں سے درخواست ہے کہ آواز بلند کریں اور ان جنگلی صفت لوگوں کو معاشرے سے ختم کریں۔

شیئر کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •