دنیا جہاں کو بنانے والا ہے خدا

اس کے حکم پر چلتی ہے ہوا

شکر کرنا چاہیے نعمتوں کا

وہی ہے مالک اس کے سامنے سر جھکا

پل پل کی خبر ہے پورے عالم کی

وہ خالق کون و مکاں، وہ ہے یکتا

پھیلا ہوا ہے نور پوری دنیا میں

دن کو روشنی بخشی، رات کو بنایا سیاہ

گلستاں کو تو  نے سرسبز و شاداب بنایا

بنائے ہیں تو  نے سمندر اور دریا

ہر دم رہتا ہے میرے دل میں تو

لگتا نہیں ڈر مجھے، تیرا ہے حوصلہ

سمیع تو کہتا ہے جانوں پر قبضہ ہے تیرا

سانس بھی نہیں آتا تیرے حکم کے سوا

شیئر کریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
11